تازہ ترین
بارسلونا: آل پارٹیز کشمیر کانفرنس، کشمیری و پاکستانی کمیونٹی کی شرکت         پاکستانی کمیونٹی کو ترقی کی منازل طے کرنے کے لئے راجہ ضیا صدیق کا خوبصورت مشورہ         وزیر اعظم پاکستان عمران خان کی دبنگ تقریر پر چوہدری ایاز مٹھانہ چک کے تاثرات         چوہدری افضال وڑائچ کے والد کی وفات پر پاکستانی کمیونٹی کا اظہار افسوس اور دعائے مغفرت         سابق وزیر خزانہ رانا محمد افضل کی وفات پر مسلم لیگ ن سپین کا اظہار افسوس         انٹرنیشنل امن کانفرنس سپین ،مولانا عبدالخبیر آزاد کی شرکت         سپین میں امراض جگر کے اسپیشلسٹ پہلے پاکستانی ڈاکٹر عرفان مجید راجہ سے بات چیت، پاک نیوز رپورٹ         کاتالان کرکٹ لیگ فائنل کے مہمان خصوصی چوہدری عزیز امرہ ونر ٹرافی دیتے ہوئے         کاتالان کرکٹ لیگ کی چیمپیئن پاک آئی کیئر نے اپنی جیت کشمیری بھائیوں کے نام کر دی         قونصلیٹ آفس بارسلونا میں کشمیر کے حق میں احتجاج مختلف شعبہ ہائے زندگی کے معززین کی شرکت         آل پاکستان فیملی ایسوسی ایشنز، اظہار ایسوسی ایشن، ایسوسی ایشن پیس فار پیس کے زیر اہتمام ہر سال کی طرح اس سال بھی ہسپیتالت میں پاکستانی بچوں میں تعلیم کو فروغ دینے کے سلسلے میں پروگرام Back to school کا انعقاد کیا         قونصل جنرل بارسلونا عمران علی چوہدری کی کاتالونیا کے نیشنل ڈے کی تقریبات میں شرکت         قونصل جنرل بارسلونا عمران علی چوہدری کی کاتالونیا کے صدر کوائم تورا سے ملاقات         قونصل جنرل بارسلونا عمران علی چوہدری کی صوبائی فارن منسٹر الفریڈ بوش ای پاسکوال سے ملاقات         ظہیر جنجوعہ نے نئی سفارتی ذمہ داریاں سنبھال لیں        

بیٹی کی پیدائش پر اسپتال کے اخراجات معاف، نیا بھارتی منصوبہ

l_141092_070735_updates

بھارت کے اسپتالوں میں لڑکی کی پیدائش پراب والدین کو بل ادا کرنے کی ضرورت نہیں رہے گی۔ جی ہاں۔۔۔بھارت ایک ایسا ملک ہے جہاں لڑکی کی پیدائش کو معیوب سمجھا جاتا ہے جبکہ لڑکوں کی پیدائش پر شادیانے بجائے جاتے ہیں ۔

اس صنفی فرق کو ختم کرنے کے لئے حکومت اس منصوبے پر غور کررہی ہے کہ آئندہ والدین کو لڑکی کی پیدائش پر اسپتال کا بل نہ دینا پڑے۔

بھارتی اخبار، ٹائمز آف انڈیا کی کی رپورٹ کے مطابق ،بھارتی شہر احمد آباد میں قائم ایک اسپتال میں خصوصی پیشکش جاری ہے جس میں ان جوڑوں کے لیے خوشخبری ہے جن کے یہاں بیٹی کی پیدائش ہوگی ۔اسپتال انتظامیہ کی جانب سے ان کا بل ادا کیا جائے گا۔

یہ اقدام بھارت میں بگڑتے ہوئے صنفی توازن کی روک تھام کے لیے کیا جارہا ہے۔

رپورٹ کے مطابق یہ اقدام ایسے معاشرے میں عمل میں لایا جارہا ہے جہاں لڑکیوں کی تعداد لڑکوں کے مقابلے میں گیارہ فیصد کم ہے۔

30 سالہ سندھو اسپتال میں گزشتہ ماہ اس نئے منصوبے کا آغاز ہوا ہے جہاں ڈیڑھ سوسے زائدخواتین کےناموں کو پہلے ہی ڈیلیوری کی غرض سے درج کیاجا چکا ہے۔

معمول کے مطابق اسپتال میں نارمل ڈیلوری کا پیکیج سات ہزار اور سی سیکشن کے لیے بیس ہزار کی قیمت وصول کی جاتی ہے۔

اسپتال کے منیجنگ ڈائریکٹر کا اس بارے میں کہنا ہے کہ’’ بہت سالوں سے ہم دیکھ رہے ہیں کہ یہاں حاملہ خواتین آتی ہیں اور لڑکے کی پیدائش کے لیےدعا گو رہتی ہیں۔

ایسے موقعوں پر بار ہا دیکھا گیا ہے کہ لڑکوں کی پیدائش پر خوب مٹھائیاں تقسیم کی جاتی ہیں اور لڑکی کی پیدائش پر وہ غمگین ہوجاتی ہیں مگر اب وقت آگیا ہے کہ بیٹی کی پیدائش پر جشن منایا جائے گا‘‘

ہسپتال میںڈلیوری کی غرض سے آنے والی ایک خاتون کا کہنا ہے کہ گزشتہ 35 سالوں سے ہمارے خاندان میں کوئی لڑکی پیدانہیں ہوئی۔میں دعا گو ہوں کہ میرے یہاں لڑکی کی پیدائش ہو۔‘‘

اسپتال انتظامیہ کی جانب سے ان خاتون کو دعائیہ القابات سے نوازا جا رہا ہے اور کہا گیا ہے اگر ان کے یہاں بیٹی کی پیدائش ہوئی تو اسپتال انتظامیہ کی جانب سے ان کے خاندان کی کیک اور اسنیکس کے ساتھ خاطر کی جائے گی ۔

صرف احمد آباد میں ہی نہیں،بھارت بھر میں یہ اقدام انتہائی ضروری ہے ۔یہ اقدام بظاہر چھوٹا مگر مثبت ہے جو اسپتال انتظامیہ اور ڈاکٹروں کی کوششوں سے پائے تکمیل کو پہنچنے والا ہے۔ ملک بھر میں پیدا ہونے والی بچیوں کی زندگیاں بچانے کے لیے یہ بہت ضروری ہے