تازہ ترین
سپین۔تارکین وطن پاکستانی مقامی سیاسی پارٹیوں کا حصہ بنیں ، حافظ عبدالرزاق صادق         سپین۔گستاخانہ خاکوں کے خلاف احتجاجی مظاہرہ ، ہزاروں افراد کی شرکت         گریگ فیسٹیول ’’ منجوئیک ‘‘ میں پاکستانی ثقافت کے رنگ ، پاکسانی شعرا نے اپنا کلام سنایا         سپین۔مسلم لیگ کا اجلاس احتجاجی ضرور تھا لیکن کسی کے خلاف نہیں ، عہدیداران         سپین۔مسیحیوں کو اپنا نمائندہ خودمنتخب کرنے کا حق دیا جائے ، راجو الیگزینڈر         میاں نواز شریف کے استقبال کے لئے سپین سے بھی قافلے پاکستان پہنچیں گے ، مسلم لیگ ن سپین         سپین۔ تصویری نمائش میں بے نظیر بھٹو شہید کی تصویر توجہ کا مرکز         سپین۔الیکٹرانک میڈیا نمائندگان کے پلیٹ فارم کے لئے ایگزیکٹو کمیٹی قائم         سپین۔سفیر پاکستان اور قونصل جنرل بارسلونا کی کمیونٹی سے ملاقات         سپین۔بارسلونا کرکٹ کلب کی یونیفارم کی رونمائی اور تقریب تقسیم انعامات ظہیر عباس کی شرکت         سپین۔کشمیر کی آواز سنو سیمینارمیں بیرسٹر سلطان محمود کی شرکت         جنرل سیکرٹری مسلم لیگ ن سپین راجو الیگزینڈر کی جانب سے بیگم کلثوم نواز کی صحت یابی کے لئے دعائیہ تقریب کا اہتمام         چین نے پاکستانیوں کیلئے ویزہ اجراء کو نہایت آسان کر دیا         انڈونیشیا میں کشتی ڈوبنے سے193افراد تاحال لاپتہ         موت سے بچ جانے والے مزید 522 تارکین وطن اٹلی پہنچ گئے، حکومت روکنے میں ناکام        
shafqat-ali-raza

سپُوت کوٹلہ ، چئیر مین ڈسٹرکٹ گجرات

بہتر مستقبل کا خواب اپنی آنکھوں میں سجائے60کی دہائی میں پاکستانیوں کی بڑی تعداد نے یورپی ممالک کا رُخ کیااور یہ سلسلہ تاحال جاری ہے ۔کچھ ممالک میں پاکستانیوں کی دوسری اور کہیں تیسری اور چوتھی نسل پروان چڑھ رہی ہے ۔پاکستانی کمیونٹی ملک سے جاتے ہوئے اپنے معاشرے اور تہذیب و تمدن کوبھی ساتھ لے گئی ۔عبادت کے لئے مساجد کی تعمیر ،پاکستان کے دیہی اور ثقافتی کھیلوں کے ٹورنامنٹس ،اپنا لباس اور لہجہ پردیس میں تارکین وطن کا خاص سرمایہ تصور ہوتا ہے ۔دیار غیر میں بسنے والے پاکستانیوں پر اپنے وطن میں ہونے والے واقعات کا اثر ملک میں رہنے والوں سے زیادہ ہوتا ہے ۔اِسی وجہ سے وہ پردیس میں رہتے ہوئے بھی وطن عزیز سے منسلک رہنے میں فخر محسوس کرتے ہیں ۔پاکستان میں رُونما ہونے والے سیاسی اُتار چڑھاو ، سیاسی اکابرین کا پارٹی بدلنا ،حکومت کا تبدیل ہونا ،ٹیلی ویژن پر سیاسی ٹاکرے ،قومی و صوبائی اسمبلی کے الیکشن ،پسند کے سیاستدانوں سے وابستگی اور اُن کو یورپ کے دوروں پر بُلا کر خدمت خاطر میں کوئی کسر نہ اُٹھا رکھنا تارکین وطن کا دلچسپ مشغلہ تصور کیا جاتا ہے ۔جن پاکستانیوں نے یورپی ممالک میں ترقی کی اُن کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ پاکستان کے جس گاؤں یا شہر سے تعلق رکھتے ہیں وہاں کی سیاسی شخصیات یورپ میں اُن کی مہمان بنیں ،تاکہ سیاستدانوں سے تعلقات بڑھیں اور میزبانوں کے اردگرد رہنے والے انہیں قابل رشک نظروں سے دیکھیں ۔یورپی ممالک میں مقیم پاکستانیوں کی زیادہ تعداد کا تعلق ضلع گجرات کے دیہاتوں سے ہے ۔

ضلع گجرات پنجاب کا اہم ترین ضلع شمار کیا جاتا ہے ۔ہر دور حکومت میں اہم پوسٹوں پر گجرات کے شہریوں نے راج کیا ہے ،وزیر اعظم ، صدر مملکت ،آرمی چیف ،چیف جسٹس ،بینکوں کے چیئر مین ،چیف آف آئی ایس آئی ،نشان حیدر ، ادیب ، فنکار ، کھلاڑی غرض کہ ہر شعبہ ہائے زندگی میں گجرات کا شمار نہائت ہونہار اعلیٰ تعلیم یافتہ اور قربانی دینے والے افراد پر مشتمل علاقوں میں ہوتا ہے ۔یہ کہنا غلط نہ ہوگا کہ سیاسی گٹھ جوڑ اور پاکستان کی حکومتی شخصیات کا عمل دخل کسی نہ کسی حوالے سے گجرات سے جڑا رہتا ہے ۔یورپ میں مقیم پاکستانیوں کے مہمان گجرات سے تعلق رکھنے والے سیاستدان ہی ہوتے ہیں جنہیں یورپ میں جانا اور پہچانا جاتا ہے ۔یہ مہمان جب خدمت خاطر کروا کر واپس پاکستان لوٹتے ہیں تو میزبانوں سے وعدہ کرکے کہ ہم جاتے ہی آپ کے تمام کام کروا دیں گے ،اپنے فون نمبرز دے آتے ہیں تاکہ اُن سے رابطے میں رہا جائے ۔پاکستان پہنچتے ہی سیاستدانوں کی زیادہ تعداد یورپ میں کروائی گئی خدمت خاطراور اپنے میزبانوں کو بھول کر اپنے کاموں میں لگ جاتی ہے جس کا شکوہ تارکین وطن اکثر کرتے نظر آتے ہیں ۔سیاستدان یہ سب جان بوجھ کر کرتے ہیں یا اُن کی مصروفیت ایسا کرنے کی وجہ بنتی ہے یہ سمجھنا تھوڑا مشکل ہے ۔سپین میں کوٹلہ برادران چوہدری عابد رضا ایم این اے، چوہدری شبیر ایم پی اے اور اُن کے بھائی محمد علی تنویر جو کہ مسلم لیگ ن کی طرف سے ضلع گجرات کی چیئر مین شپ کے امیدوار ہیں کی آمد پریورپ میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ ان مہمانوں کی بڑھ چڑھ کر خدمت کریں ۔ ہم نے کوٹلہ کے ایک رہائشی سے اس کی وجہ دریافت کی توجواب ملا کہ یہ واحد سیاستدان ہیں جو نہ صرف اپنے اہل حلقہ کا خیال رکھتے ہیں بلکہ ان کے حلقے سے تعلق رکھنے والے جو افراد بیرون ممالک مقیم ہیں ان کے حقوق کی پاسداری کرنا اپنا فرض سمجھتے ہیں ۔ہمیں تجسس ہوا ہم بھی بارسلونا آمد پر کوٹلہ برادران کو ملے جنہوں نے ہمیں دعوت دی کہ ہم اُن کے حلقہ کا دورہ کریں اور خود دیکھیں کہ ہم کس طرح سیاست کو عبادت سمجھ کر اپنے اہل حلقہ کے حقوق کی جنگ لڑتے ہیں ۔

ہم یہ دیکھنے پاکستان پہنچ گئے اور کوٹلہ برادران کے حلقہ کا دورہ کیا ۔22دسمبر کوگجرات کے ضلعی چیئر مین کی دستار اپنے سر پر سجانے کے لئے قاف لیگ کی طرف سے چوہدری شجاعت حسین کی ہمشیرہ سمیرا الہیٰ اور نون لیگ کی طرف سے محمد علی تنویر کوٹلہ میدان میں اُترے ہیں ۔ہم چوہدری امتیاز آکیہ کے ساتھ بارسلونا سے گجرات پہنچے اور اِن امیدواروں کی الیکشن مہم اپنی آنکھوں سے دیکھی ۔اہل علاقہ سے معلوم ہوا کہ چوہدری شجاعت اپنے خاندان کی ساکھ بچانے کے لئے آخری سیاسی بازی کھیل رہے ہیں قاف لیگ نے بلدیاتی انتخابات میں بہت تھوڑی نشستیں حاصل کی ہیں اسی لئے انہوں نے تحریک انصاف سے اتحاد بنا لیا ہے، لیکن تحریک انصاف کے کئی چیئر مین نون لیگ کو ووٹ دے رہے ہیں اسی طرح آزاد امیداواروں نے بھی نون لیگ کو اپنانے میں ہی عافیت سمجھی ہے اور اگر قاف لیگ کااُمیدوار ہار گیا تو گجرات میں چوہدری شجاعت برادران کی سیاست ختم ہو جائے گی جس کا خمیازہ قاف لیگ کو 2018کے عام انتخابات میں بھگتنا ہوگا۔اِسی طرح کچھ افراد کا کہنا تھا کہ کوٹلہ برادران نے جس طرح مشکل حالات سے نکل کر گجرات کی سیاست کی بازی پلٹی اور چوہدری شجاعت برادران کا مقابلہ کیا اُس سے ظاہر ہو رہا ہے کہ ضلعی چیئر مین کی دستارکل کوٹلہ برادران اپنے سر سجا لیں گے اس جیت کی وجہ کوٹلہ برادران کا غریب عوام کا ساتھ اور مجبور وں کے ساتھ کھڑا ہونا ہے ۔اور 22دسمبر کو چیئر مین ضلع کونسل کا الیکشن ہوا جس کے نتائج کے مطابق محترمہ سمیرا الہیٰ 63ووٹ ھاصل کر سکیں اور چوہدری تنویر کوٹلہ 77ووٹ لے کر جیت گئے اور ضلع گجرات کے چیئر مین کی دستاراپنے سر پر سجا لی ۔ہمیں غیر جانبدار افراد نے یہ معلومات بھی دیں تھیں کہ حکومت پنجاب نے جو اوورسیز بینچ بنایا ہے اُس کے تحت تارکین وطن کے مسائل کے حل میں پیش پیش کوٹلہ کے ایم پی اے چوہدری شبیرکوٹلہ کو حکومت پنجاب نے تارکین وطن کے سب سے زیادہ مسائل حل کروانے پر شیلڈ سے نوازا ہے ۔اوورسیز پاکستانیوں کی زبانی یہ سُنا تھا کہ کوٹلہ برادران یورپ کے دوروں سے واپس جا کر ہمیں بھولتے نہیں بلکہ وہ ہمارے کام کراتے ہیں اور پاکستان سے اُلٹا ہمیں فون پر پوچھتے ہیں کہ کیا آپ کا کام ہوگیا تھا ، اگر کوئی اور کام ہے تو ہمیں بتائیں۔ہمارے لئے یہ حیران کن بات تھی ۔ہمپانچ دن ضلع گجرات میں رہے ضلعی چیئر مین الیکشن کی مہم اور نتائج دیکھ کرآج سپین واپس جا رہے ہیں ۔بارسلونا میں ایم پی اے چوہدری شبیر ،ایم این اے چوہدری عابد رضا اور نومنتخب چیئر مین ضلع کونسل چوہدری تنویر کوٹلہ سے ہماری ایک ایک ملاقات ہوئی تھی ، لیکن گجرات پہنچنے پر ہمیں جس انداز اور خندہ پیشانی سے خوش آمدید کہا گیا اُس سے اندازہ ہوا کہ یہ برادران جسے ایک بار مل لیں واقعی اُسے ہمیشہ یاد رکھتے ہیں ۔