تازہ ترین
چوہدری مظہر وڑائچانوالہ کے کزن چوہدری فیضان گھیگی کے لئے قران خوانی کے مناظر         چوہدری مظہر وڑائچانوالہ کے کزن چوہدری فیضان گھیگی کی روح کے ایصال ثواب کے لئے ختم شریف اور محفل قران خوانی         تحریک انصاف کا مختلف ممالک میں انٹرا پارٹی الیکشن کا اعلان کر دیا گیا ، طارق رفیق بھٹی         میر نوید جان کاگوادر چیمبر آف کامرس کا صدر منتخب ہونا خوش آئند ہے۔ ذیشان چوہدری         شجاع کرکٹ اسٹیڈیم جرونا کی افتتاحی تقریب ، فیتہ چوہدری امانت حسین مہر نے کاٹا         ضمنی الیکشن میں بیگم کلثوم نواز کی جیت جمہوریت اور حق سچ کی جیت ہے ، حاجی ا سد حسین         ایک شام مسرت عباس کے نام پروگرام میں اسٹیج پر بیٹھے آرگنائزرز اور مہمان خصوصی کی تصاویر         ایک شام مسرت عباس کے نام کے مہمان خصوصی چوہدری اختر علی چھوکر کلاں ، چوہدری مسرت اور یونس پرواز کی یادگار تصویر         پاکستان مسلم لیگ ن سپین کے صدر حاجی اسد حسین کی ایک شام مسرت عباس کے نام میں خصوصی شرکت         چوہدری کلیم الدین وڑائچ کی چوہدری امتیاز لوراں کو میاں محمد بخش کا کلام سنانے کی بھر پور فرمائش         چوہدری امتیاز لوراں اور چوہدری کلیم الدین وڑائچ کی دوسرے مہمانوں سمیت مسرت عباس کے ساتھ تصویر         بارسلونا میں یوتھ کے راہنما میاں شیراز اور چوہدری عمران چھوکر کی مسرت عباس کے ساتھ ملاقات         چوہدری اختر علی آف چھوکر کے ساتھ چوہدری متین امتیاز اور چوہدری مبین امتیاز کی تصویر         سکائی ویز ریسٹورنٹ پر مسرت عباس کے نام ایک شام میں شرکا کی تواضع کی تصویری جھلکیاں         بارسلونا میں دہشت گردی اور میانمار میں مرنے والے بے گناہوں کے لئے ایک منٹ کی خاموشی        
1501426911dailyausaf

پاکستان کی کمزورخارجہ پالیسی کی وجہ سے مسئلہ کشمیرسردخانے کی زینت بن گیا،چوہدری یاسین

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی سکیورٹی اداروں کی جارحیت’ انسانی حقوق کی پامالی’ عورتوں کی عصمت دری’ نوجوانوں کی جان بوجھ کر پیلٹ گن ے نشانہ بنا کر بینائی سے محروم کرنا روز کا معمول بن گیا ہے ایسے میں بین الاقوامی سطح پر پاکستان کی کمزور خارجہ پالیسی کی وجہ سے مسئلہ کشمیر سرد خانے کی زینت بن گیا ہے اور عالمی انسانی حقوق کی تنظیموں کا کردار سوالیہ نشان ہے۔ بھارت کے وزیراعظم مودی اور پاکستان کے سابق حکمرانوں کے اجتماعی مفادات کی بدولت کشمیری قوم ظلم کی چکی میں پس رہی ہے۔ یہ باتیں آزاد کشمیر کے سابق سینئر وزیر اور موجودہ اپوزیشن لیڈر چوہدری محمد یاسین نے مقامی ریسٹورنٹ میں ایک پریس کانفرنس کے موقع پر کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ بحیثیت کشمیری ہماری اولین ترین ترجیح ہے کہ سرحد کے اس پار کشمیریوں پر ہونے والے مظالم کے بارے بھرپورکردار ادا کریں میں نے اس مقصد کے لئے اپنی زندگی کو وقف کردیا ہے کشمیر کے بیٹے بریان مظفر وانی شہید کی قربانی ضرور رنگ لائے گی اس سے تحریک آزادی کشمیر میں مزید تیزی آئی ہے۔ 19 ستمبر کو سوئٹزر لینڈ کے شہر جنیوا میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے ہیڈ کوارٹر میں اجلاس منعقد ہورہا ہے ہم نے اس سلسلے میں ایک بھرپور مظاہرے کا پروگرام بنایا ہے اس مقصد کے لئے اس پریس کانفرنس کا انعقاد کیا ہے برطانیہ اور یورپ بھر کے محب الوطن کشمیریوں کو اس میں شرکت کرکے بھارتی سرکار کی مقبوضہ کشمیر میں وحشیانہ کارروائیوں اور جارحیت بارے عالم اقوام کو توجہ دلانا ہوگی۔ میں بھی اس سلسلے میں لوگوں کے پاس جا کر آگاہی دونگا اور میڈیا کی بھی ذمہ داری ہے کہ وہ اس سلسلے میں اپنا کردار ادا کرے کیونکہ اس وقت عالمی سطح پر اس بارے بھرپور آگاہی نہیں ہے ہمیں اس پر بہت زیادہ کام کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ پاکستان کی موجودہ سیاسی صورتحال بارے انہوں نے کہا پہلی دفعہ عدالت عظمیٰ نے آزادانہ اور غیر جانبدارانہ بغیر کسی دبائو کے طاقتور کو قانون کے مطابق سزا دی ہے جو کہ ایک خوش آئند بات ہے۔ میاں نواز شریف جو پچھلے 37 سالوں سے سیاست کے میدان مین اپنے حریفوں کے لئے کرتے آئے ہیں آج اسی کے جال میں پھنسے ہیں مسئلہ کشمیر کو پچھلے چار سالوں میں میاں نواز شریف نے بحیثیت وزیراعظم پس پشت ڈال دیا اس کی بنیادی وجہ بھارت میں ان کے کاروبار ہیں۔ انہوں نے ملکی مفادات کو ترجیح دینے کی بجائے ذاتیات کا تحفظ کیا سیاست میں رشوت خوری’ خرید و فروخت ‘ اداروں میں من پسند افراد کی تعیناتی غرضیکہ پورے انفراسٹرکچر کو یرغمال بنایا ہوا تھا آخر یہ تو ہونا ہی تھا۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کشمیر کونسل کے فنڈز کا ناجائز استعمال کرکے آزاد کشمیر میں ہونے والے انتخابات میں دھاندلی کرکے جماعت کو دو تہائی اکثریت دلوائی ہم نے صرف جمہوریت کی خاطر قبول کیا۔ معاشرے کی تعمیر و ترقی کے لئے تعلیم کا عام ہونا ضروری ہوتا ہے ہم نے اپنے دور حکومت پانچ یونیورسٹیاں’ تین میڈیکل کالج اور ایک میڈیکل یونیورسٹی کا اجراء کیا اس سے پہلے آزاد کشمیر کے طلباء و طالبات کو پاکستان بھر کے دور دراز علاقوں کی یونیورسٹیوں میں ایک کڑے مرحلے کے بعد داخلہ ملتا تھا آزاد کشمیر کی تاریخ میں پہلی دفعہ ایسا ہوا مرکزی شاہرائوں کی کشادگی کی گئی ہمارا دور اقتدار سنہری تھا جبکہ ہمارے آج کے حکمران نوکریاں دینے کی بجائے تمام محکمہ جات میں سے لوگوں کو فارغ کرکے بے روزگار کررہے ہیں یہ منطق سمجھ سے بالاتر ہے۔ انہوں نے میڈیا کا شکریہ ادا کیا جو مختصر نوٹس پر تشریف لائے۔