تازہ ترین
زبیر گل کے خلاف ہونے والی سازش تمام تارکین وطن کے خلاف سازش ہے ،لیگی عہدیداران         مسلم لیگ ن سپین کے صدر ایاز عباسی اور سرپرست اعلی حاجی اسد حسین کی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی انوشہ رحمان سے ملاقات         پاکستانی کمیونٹی کے مسائل کا حل اؤلین ترجیح ہو گی ، خیام اکبرسفیر پاکستان میڈرڈ         مسلم لیگ ن سپین آج شام سات بجے کایئے چلی میں جشن منائے گی ، مٹھائی تقسیم کی تقریب بھی ہو گی         کشمیریوں پر ایک ماہ میں 13 لاکھ پیلٹ گنز فائر کیےگئے،کشمیر پولیس         چار روزہ ورلڈ موبائل کانگریس بارسلوناکا اختتام ، انوشہ رحمان کی شرکت         سوسائٹی فار کرائسٹ اور مسلم لیگ ن سپین کی سانحہ شاہدرہ پر مشترکہ پریس کانفرنس         پاکستانی سیاست کے یورپی ممالک میں مقیم پاکستانیوں پر اثرات ، پاک نیوز سروے رپورٹ         MWC 2018: the biggest news from Mobile World Congress in Barcelona         پاکستان پیپلز پارٹی برطانیہ میں تقرریوں کا سلسلہ جاری         بھارتی لیجنڈری اداکارہ سری دیوی انتقال کرگئیں         کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے لاہور قلندرز کو 9 وکٹوں سے ہرا دیا         ویسٹ انڈیز کا دورئہ پاکستان خطرات سے دوچار         سائرہ پیٹر کی پی لیک فیسٹیول میں شاندار پرفارمنس         اردوان نے اپنے بدترین دشمن سے ہاتھ ملا لیا        
pic-barcelona5

چار روزہ ورلڈ موبائل کانگریس بارسلوناکا اختتام ، انوشہ رحمان کی شرکت

بارسلونا(شفقت علی رضا )دنیا میں موبائل ٹیکنالوجی کا سب سے بڑا ایونٹ 26 فروری سے بارسلونا میں شروع ہو کر یکم مارچ کو ختم ہو گیا۔ایونٹ میں دنیا بھر سے مختلف کمپنیز کے نمائندوں نے شرکت کی ، پاکستان کی سٹیٹ منسٹر انفارمیشن ٹیکنالوجی انوشہ رحمان بھی منسٹریل میٹنگ کے لئے کانگریس میں شریک ہوئیں ، ورلڈموبائل کانگریس میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کی نمائندگی ایک سٹال کی صورت میں موجود تھی جہاں انچارج سلیمان حسن اپنے ساتھ6 آئی ٹی کمپنیز کو لے کر آئے تھے ، پاکستانی سٹال پر غیر ملکی کمپنیز کے نمائندوں کی دلچسپی دیکھنے کو ملی ، نمائندہ جنگ سے بات کرتے ہوئے سلیمان حسن نے بتایا کہ آئی ٹی پاکستان کی وہ واحد انڈسٹری ہے جو سب سے زیادہ منافع بخش ہے ، پاکستان میں اس وقت 25سو آئی ٹی کمپنیز کام کر رہی ہیں ، یہ واحد انڈسٹری ہے جس کا ایکسپورٹ ریونیو 3بلین ڈالرز سالانہ ہے ،10سال سے اس انڈسٹری میں 30سے 40فیصد سالانہ اضافہ ہو رہا ہے ، انہوں نے بتایا کہ ہم چار سال سے بارسلونا کی اس ورلڈ کانگریس میں آ رہے ہیں ہم نے یہاں سے 5لاکھ سے ایک ملین ڈالرز کا بزنس لیا ہے، ہم ترکی ، اٹلی ، آزربائیجان ، امریکا ، جرمنی ، سپین برطانیہ اور دوسرے یورپی ممالک کے ساتھ کام کر رہے ہیں ، انہوں نے بتایا کہ آنے والا دور ٹیکنالوجی کی جدت کا دور ہے اور پاکستان کے پاس اس وقت تین لاکھ آئی ٹی پروفیشنلز موجود ہیں ، انہوں نے کہا کہ دُنیا کے مختلف ممالک سے ہماری بات چل رہی ہے کہ وہ ممالک ہمارے پروفیشنلز کو اپنیہاں نہ بلائیں بلکہ وہ ہمارے پروفیشنلز سے کام کروائیں اور اس کام کی قیمت انہیں پاکستان میں ہی ادا کریں ۔ سلیمان حسن نے بتایا کہ ہم فنانشل ، موبائل ، بینکنگ ، ویب ڈویلپرز اورٹیکنالوجی کے تمام شعبوں میں کام کر رہے ہیں ۔اس موقع پر پاکستانی سٹال پر امریکی خاتون سے بھی ملاقات ہوئی جس کی کمپنی آئی ٹی کے شعبہ میں پاکستان کی پارٹنر ہے ۔پاکستانی سٹال پر وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی انوشہ رحمان سے بھی بات ہوئی تو انہوں نے بتایا کہ اس سال ہم اپنے ساتھ6 کمپنیز لائے ہیں لیکن آئندہ سال ہم کم از کم بیس کمپنیز کو ساتھ لائیں گے ، انہوں نے کہا کہ آئی ٹی انڈسٹری میں بہت وسعت ہے کیونکہ آنے والا وقت ٹیکنالوجی میں مزید ترقی کا وقت ہے اس لئے ہم نے آئی ٹی انڈسٹری پربہت فوکس کیا ہے کیونکہ اس سے ہمارے ملک کی یوتھ وابستہ ہے ، اس موقع پر انوشہ رحمان نے چائنا کی ایک کمپنی کے ساتھ پاکستان کی اُن بچیوں کے لئے ایک معاہدہ کیا جنہیں حکومت پاکستان نے کمپیوٹرز کی کلاسز مکمل کرائی ہیں ، انہوں نے بتایا کہ ہم نے اسلام آباد اور بیت المال کے زیر انتظام سکولوں کی ایک لاکھ 48ہزار بچیوں کو کمپیوٹرز کلاسز کرائی ہیں تاکہ وہ مستقبل میں اپنی مدد آپ کے تحتروزگار سے وابستہ ہو سکیں ، یہ کمپیوٹرز کلاسز تین ماہ کے کورس پر مشتمل ہیں ان کلاسز میں جو بچیاں ’’ ٹاپ ‘‘ کریں گی انہیں چائنا کی کمپنی کی طرف سے ایک ایک ٹیب دیا جائے گا ، انہوں نے بتایا کہ حکومت پاکستان کا یہ اقدام بہت احسن ہے کیونکہ ہم چھوٹی عمر سے ہی بچیوں کو کمپیوٹر کی تعلیم دینا شروع کرتے ہیں تاکہ وہ بچیاں مستقبل میں ٹیکنالوجی کی دوڑ میں پیچھے نہ رہ جائیں ، انہوں نے بتایا کہ اس کانگریس میں ہم ہر سال ایوارڈ جیت کر جاتے ہیں جو پاکستان کے لئے بڑے فخر کی بات ہے ، ہمیں ایوارڈ اسی لئے دیا جاتا ہے کیونکہ ہم بہت کم وسائل میں ٹیکنالوجی کی اس دوڑ میں سب کے ساتھ مل کر آگے بڑھ رہے ہیں ، انہوں نے کہا کہ پاکستان میں جی تھری اور جی فور سسٹم لے جانا بھی حکومت پاکستان کا اقدام ہے ، انہوں نے کہا کہ ہمیں مزید موقع ملا تو ہم پاکستان کی آئی ٹی انڈسٹری کو دنیا کے ترقی یافتہ ممالک کی صف میں لا کھڑا کریں گے اس گفتگو کے دوران پاکستانی سٹال پر سفیر پاکستان سپین خیام اکبر اور کمرشل قونصلر ڈاکٹر حامد بھی موجود تھے ۔

pic-barcelona1pic-barcelona2pic-barcelona4pic-barcelona3pic-barcelona6