تازہ ترین
سپین میں امراض جگر کے اسپیشلسٹ پہلے پاکستانی ڈاکٹر عرفان مجید راجہ سے بات چیت، پاک نیوز رپورٹ         کاتالان کرکٹ لیگ فائنل کے مہمان خصوصی چوہدری عزیز امرہ ونر ٹرافی دیتے ہوئے         کاتالان کرکٹ لیگ کی چیمپیئن پاک آئی کیئر نے اپنی جیت کشمیری بھائیوں کے نام کر دی         قونصلیٹ آفس بارسلونا میں کشمیر کے حق میں احتجاج مختلف شعبہ ہائے زندگی کے معززین کی شرکت         آل پاکستان فیملی ایسوسی ایشنز، اظہار ایسوسی ایشن، ایسوسی ایشن پیس فار پیس کے زیر اہتمام ہر سال کی طرح اس سال بھی ہسپیتالت میں پاکستانی بچوں میں تعلیم کو فروغ دینے کے سلسلے میں پروگرام Back to school کا انعقاد کیا         قونصل جنرل بارسلونا عمران علی چوہدری کی کاتالونیا کے نیشنل ڈے کی تقریبات میں شرکت         قونصل جنرل بارسلونا عمران علی چوہدری کی کاتالونیا کے صدر کوائم تورا سے ملاقات         قونصل جنرل بارسلونا عمران علی چوہدری کی صوبائی فارن منسٹر الفریڈ بوش ای پاسکوال سے ملاقات         ظہیر جنجوعہ نے نئی سفارتی ذمہ داریاں سنبھال لیں         ذوالجناح کی تاریخ کیا ہے ؟         نوحہ کی تاریخ کیا ہے ؟         مقبوضہ کشمیر، ناکہ بندی مزید سخت، محرم کے جلوسوں پر بھارتی فوج کی فائرنگ، شیلنگ، کئی افراد زخمی         کھبی کھبی لوگ آپکی دل سے مدد کرنا چاہتے ہیں ، لیکن؟         سپین میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کو دوہری شہریت کے قانون پاس ہونے کی خوشخبری جلد         قرطبہ ریسٹورنٹ کے ڈائریکٹر ملک شریف کی دوست احباب کے ساتھ گروپ فوٹو        
تعلیم کے شعبے میں پاکستان سے اچھے تعلقات چاہتے ہیں، ناروے

تعلیم کے شعبے میں پاکستان سے اچھے تعلقات چاہتے ہیں، ناروے

ناروے کی وزیر برائے تحقیق و اعلیٰ تعلیم مس اسے لین نائبو نے کہا ہے کہ ہم پاکستان کے ساتھ اعلیٰ تعلیم کے شعبے میں اچھے تعلقات اور دوطرفہ تعاون کا فروغ چاہتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ناروے میں پاکستانیوں کی متحرک سماجی تنظیم ’پاکستان یونین ناروے‘ کی سالانہ تقریب کے دوران خطاب کرتے ہوئے کیا۔

یہ تقریب یوم آزادیٔ پاکستان کے حوالے سے اوسلو میں منعقد ہوئی جس سے ناروے کی وزیر برائے تحقیق و اعلیٰ تعلیم مس ایسے لین نائبو کے علاوہ پنجاب کے وزیر برائے اعلیٰ تعلیم و آئی ٹی راجہ یاسر ہمایوں سرفراز، پاکستان یونین ناروے کے چیئرمین چوہدری قمراقبال، پاکستانی نژاد نائب سربراہ نارویجن پارلیمنٹ عابد قیوم راجہ، ناروے کی پارلیمنٹ کی خارجہ امور اور دفاعی کمیٹی کی سربراہ مس انیکن ہوتفیلدت، پاکستان کے سابق وزیراطلاعات قمرالزمان کائرہ، اراکین پارلیمنٹ پیٹر ایدے اور مدثر کپور، سفیر پاکستان برائے ناروے ظہیر پرویز خان، کڈنی سینٹر گجرات کے صدر میاں محمد اعجاز، لورنسکگ ناروے کی میئر مس راگن ہیلد برگھیم اور اوسلو کے میئر کے عہدے کی پاکستانی نژاد امیدوار سائیدہ روشنی بیگم نے بھی خطاب کیا۔

تقریب میں پاکستان سے بھی کئی مندوبین شریک ہوئے، تقریب کے دوران سفارت خانہ پاکستان کے کمیونٹی ویلفیئر اتاشی خالد محمود بھی موجود تھے جبکہ میزبانی کے فرائض اردو کے ممتاز دانشور شاہ رخ سہیل اور نارویجن زبان میں ڈاکٹر فرحت انجم نے سرانجام دیے۔

نارویجن وزیر برائے اعلیٰ تعلیم مس نائبو نے کہا کہ پچھلی پانچ دہائیوں کے دوران ناروے کی تعمیر و ترقی میں نارویجن پاکستانیوں کا کردار بہت اہم ہے، پاکستانیوں کو ناروے آئے ہوئے آج 50 سال ہو چکے ہیں، ان کی پہلی نسل نے ناروے آکر بہت محنت کی اور آج ان کی دوسری اور تیسری نسل پروان چڑھ رہی ہے، آج ناروے میں نارویجن پاکستانی زندگی کے اہم شعبوں بشمول سیاست، سرکاری اداروں و مختلف قسم کے کاروبار میں پیش پیش ہیں۔

پنجاب کے وزیر برائے اعلیٰ تعلیم و انفارمیشن ٹیکنالوجی راجہ یاسر ہمایوں سرفراز نے کہا کہ کسی بھی ملک کی ترقی میں تعلیم کا کردار بہت اہم ہے، ہم پنجاب میں اعلیٰ تعلیم کے نظام میں اصلاحات لا رہے ہیں تاکہ ہمارے کالجوں اور یونیورسٹیوں میں اعلیٰ معیار کی تعلیم میسر ہو سکے، اس کے علاوہ دیگر ممالک کے تعلیمی اداروں سے بھی تعاون حاصل کرنے کے لیے کوششیں جاری ہیں۔

پاکستان یونین ناروے کے چیئرمین چوہدری قمراقبال نے کہاکہ ہم بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کے اصولوں پر پابند رہ کر پاکستان کو ترقی دے سکتے ہیں، انہوں نے تقریب میں شریک تمام افراد بشمول مہمانانِ خصوصی کا شکریہ ادا کیا۔

ناروے کی پارلیمنٹ کے پاکستانی نژاد ڈپٹی اسپیکر عابد قیوم راجہ نے کہا کہ پاکستان کی ترقی کے لیے تعلیم کا فروغ ضروری ہے، اس حوالے سے ناروے اور پاکستان کے مابین تعاون بڑھنا چاہیے۔

انہوں نے ناروے کی پاکستان کے حوالے سے ویزا پالیسی کے بارے میں کہا کہ اگرچہ موجودہ ویزا پالیسی سخت ہے لیکن ہماری کوشش ہے کہ اس پالیسی پر نظرِثانی کر کے اس میں تبدیلی لائی جائے۔

عابد قیوم راجہ نے ناروے میں مذہبی انتہاپسندی کے بارے میں ایک مسجد پر حالیہ حملے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ مذہبی منافرت ہرگز قابل قبول نہیں، ہمیں چاہیے کہ کسی کو نفرت کا موقع ہی نہ دیں۔

ناروے میں پاکستان کے سفیر ظہیر پرویز خان نے اس شاندار تقریب کے انعقاد پر پاکستان یونین ناروے کے چیئرمین چوہدری قمر اقبال کو مبارک باد پیش کی اور کہا کہ ناروے کی  پاکستانی کمیونٹی نے ہمیشہ ہر مشکل وقت میں پاکستان میں اپنے عزیز و اقارب کی مدد کی ہے اور ساتھ ساتھ ملکی اجتماعی مشکلات میں بھی ہمیشہ اپنا مالی تعاون پیش کیا ہے۔

ناروے کی پارلیمنٹ کی خارجہ اور دفاعی امور کی کمیٹی کی سربراہ مس انیکا نے ناروے میں پاکستانیوں کے پچاس سال پورا ہونے اور یوم آزادی پاکستان کی مناسبت سے پاکستانیوں کو مبارک باد دی۔

اس موقع پر کڈنی سینٹر گجرات کے بورڈ کے صدر حاجی میاں محمد اعجاز، لورنسکگ ناروے کی میئر راگنلد برگھیم، اراکین نارویجن پارلیمنٹ پیٹر ایدے اور مدثر کپور اور اوسلو کی میئر کی امیدوار پاکستانی نژاد سائیدہ روشنی بیگم نے بھی اپنے خطاب میں پاکستانیوں کو مبارک باد دی اور کہا کہ یہاں رہنے والے پاکستانی اہم حیثیت رکھتے ہیں اور ان کی یہ اہمیت ان کی محنت کی وجہ سے ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان یونین ناروے ہر سال اگست میں آزادی پاکستان کے حوالے سے اوسلو میں ایک بڑی تقریب منعقد کرتی ہے جس میں پاکستان اور ناروے سے اعلیٰ حکام اور اہم شخصیات شریک ہوتی ہیں، اس سال یہ تقریب ایسے وقت منائی جارہی جب پاکستانیوں کو ناروے میں آئے ہوئے 50 سال پورے ہوچکے ہیں۔

اس سال تقریب میں پاکستان کے ایک نجی خیراتی ادارے کڈنی سینٹر   گجرات کے لیے چیئریٹی کنسرٹ بھی شامل کیا گیا، ناروے سے کڈنی سینٹر   گجرات (جو غریب اور نادار لوگوں کو مفت علاج فراہم کر رہا ہے) کے لیے ایک کروڑ 30 لاکھ کی امداد جمع کی گئی اور کئی لوگوں نےآئندہ بھی اس ادارے کو مالی معاونت کا یقین دلایا۔

تقریب میں کڈنی سینٹر کے لیے ناروے میں فنڈریزنگ میں بھرپور حصہ لینے والی شخصیات کو ڈی سی گجرات (چیئرمین کڈنی سینٹر گجرات) اور کڈنی سینٹر گجرات کے صدر اور چیئرمین پاکستان یونین ناروے کی طرف سے تعریفی اسناد دی گئیں۔

تقریب کے دوران پاکستان اور ناروے کے تعلقات کو بہتر بنانے اور دیگر اہم شعبوں میں نمایاں کارکردگی دکھانے والوں کو ایوارڈز بھی دیئے گئے۔

اس موقع پر مقامی پاکستانی خاتون مشعل سارہ میر نے ملی نغمہ پیش کر کے داد وصول کی، اس دوران پاکستان اور ناروے کے قومی ترانے بجائے گئے اور اختتامی مرحلے میں پاکستان کی معروف گلوکارہ نوراں لال اور لوک فنکار طاہر محمود نیئر نے صوفیانہ کلام پیش کیا۔