تازہ ترین
سپین: کشمیری رہنما مقبول بٹ شہید کی 36ویں برسی پر تقریب         آرمی کمانڈو اور سابق باکسر ظفر پہلوان کی ساتھیوں سمیت کشمیر ریلی میں شرکت         قونصل جنرل بارسلونا کے ساتھ مل کر یوم پاکستان پروگرام کامیاب بنائیں گے ، میاں محمد اظہر و راجو الیگزینڈر         جاوید ڈار کو حمزہ جاوید ڈار کی تعلیمی کامیابی پر چوہدری نوید وڑائچ کی مبارک باد         کشمیر ریلی بارسلونا میں چوہدری نزیر احمد نواں کی بھر پور شرکت         کشمیر ریلی میں ایاز مٹھانہ ، راجہ بابر ناصر اور قدیر احمد خان کی شرکت         چوہدری امتیاز آکیہ کی کشمیر ریلی بارسلونا میں بھر پور شرکت         کشمیر ریلی رامبلہ راوال میں چوہدری گلریز بوگا کی شرکت         مسلم لیگ ن سپین قافلے کی صورت کشمیر ریلی میں شریک         ندائے کشمیر ایسوسی ایشن سپین کے زیر اہتمام کشمیر ریلی کا انعقاد         حاجی اسد حسین کی برطانیہ میں سہیل وڑائچ ، طاہر چوہدری اور حمزہ باسط بٹ سے ملاقات         کاتالونیا میں آزادی کی تحریک پھر زور پکڑ گئی ہے         کشمیر اور خالصتان کی آزادی کے لئے ریفرنڈم ٹونٹی ٹونٹی کا اعلان، شفقت علی رضا         علامہ اقبال ؒ کے یوم پیدائش پراوسپتالیت کے اُردو سکول میں شاندار تقریب         بارسلونا: آل پارٹیز کشمیر کانفرنس، کشمیری و پاکستانی کمیونٹی کی شرکت        

نوحہ کی تاریخ کیا ہے ؟

واقعہ کربلا کو فقط چند ہی لمحے گزرے تھے کہ دختر علی ابن ابی طالب جناب زینب سلام اللّٰہ علیہ نے اپنے نانا حضرت محمدﷺ کو مخاطب کرکے فریاد کی جسے بعد میں نوحہ زینب کہا جانے لگا۔

واقعہ کربلا کے بعد عرب کے سبھی شعراء نے حسینی قافلے کی داستان پر بے شمار نوحے لکھے، ان میں سب سے عظیم نوحہ امام آخری الزمان علیہ سلام کا ہے، جو کہ زیارت ناخیہ کے نام سے مشہور ہوا۔

نوحے کی روایت خطہ عرب سے ہوتی ہوئی ایران پہنچی یوں نوحہ اپنی ارتقائی منازل طے کرتا ہوا برصغیر پہنچا جہاں حیدرآباد دکن کے ثقافتی آہنگوں دبستان لکھنوء کی ادبی روایات یا شمالی ہندوستان کے عظیم المرتبت شعراء سبھی نے اس صنف کو ہاتھوں ہاتھ لیا۔

مرزا رفیع سودا، میر تقی میر، مصحفی، انشاء اور جرات کی کلیات میں شاہکار نوحے نظر آتے ہیں جبکہ مرزا دبیر اور میر انیس نے نوحے کی صنف کو اردو کی ادبی معراج پر پہنچاتے ہوئے شاندار نوحے لکھے۔